ڈپٹی اسپیکر کی رولنگ کالعدم پرویز الٰہی وزیراعلیٰ پنجاب

ڈپٹی اسپیکر پنجاب اسمبلی دوست محمد مزاری کے وکیل عرفان قادر عدالت میں پیش ہوئے

پاکستان تحریک انصاف کے نامزد امید وار چوہدری پرویز الٰہی نے وزیراعلیٰ کے انتخاب میں 186 جبکہ حمزہ شہباز نے 179 ووٹ لئے تھے تاہم ڈپٹی اسپیکر دوست محمد مزاری نے (ق) لیگ کے 10 ووٹ حذف کردیئے تھے جس کی وجہ سے حمزہ شہباز 179 ووٹ لے کر کامیاب قرار پائے تھے جس پر پرویز الٰہی نے سپریم کورٹ سے رجوع کیا تھا اس سے قبل چیف جسٹس پاکستان عمر عطا بندیال کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے تین رکنی بینچ نے ڈپٹی اسپیکر پنجاب اسمبلی رولنگ کیس کی سماعت کی

سپریم کورٹ نے ڈپٹی اسپیکر رولنگ کیس کا محفوظ فیصلہ سنادیا، ڈپٹی اسپیکر کی رولنگ کالعدم، حمزہ شہباز فارغ، پرویز الٰہی وزیراعلیٰ پنجاب بن گئے۔

اس سے قبل چیف جسٹس پاکستان عمر عطا بندیال کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے تین رکنی بینچ نے ڈپٹی اسپیکر پنجاب اسمبلی رولنگ کیس کی سماعت کی ڈپٹی اسپیکر پنجاب اسمبلی دوست محمد مزاری کے وکیل عرفان قادر عدالت میں پیش ہوئے اور حکومتی بائیکاٹ سے متعلق بتایا کہ مجھے کہا گیا ہے عدالتی کارروائی کا مزید حصہ نہیں بنیں گے، ہم فل کورٹ درخواست مسترد کرنے کے حکم کیخلاف نظر ثانی دائر کرینگے۔ یہ کہہ کر عرفان قادر سپریم کورٹ سے واپس چلے گئے۔ وکیل فاروق ایچ نائیک پیش ہوئے اور کہا کہ پی پی پی بھی عدالت میں پیش نہیں ہوگی چیف جسٹس عمر عطابندیال نے کہا کہ فل کورٹ کی تشکیل کیس لٹکانے سے زیادہ کچھ نہیں تھا، ستمبر کے دوسرے ہفتے سے پہلے ججز دستیاب نہیں، گورننس اور بحران کے حل کیلئے جلدی کیس نمٹانا چاہتے ہیں، آرٹیکل 63 اے کے مقدمہ میں پارلیمانی پارٹی کی ہدایات کا کوئی ایشو نہیں تھا۔

چیف جسٹس نے کہا کہ ہم نے یہ فیصلہ کیا کہ موجودہ کیس میں فل کورٹ بنانے کی ضرورت نہیں ہے، کیا سترہ میں سے آٹھ ججز کی رائے کی سپریم کورٹ پابند ہو سکتی ہے؟۔

وکلاء کے دلائل مکمل ہونے کے بعد عدالت نے فیصلہ محفوظ کرلیا تھا جبکہ فیصلہ سنانے سے قبل ممکنہ ردعمل سے نمٹنے کیلئے سپریم کورٹ کے اطراف سیکورٹی ہائی الرٹ رکھی گئی تھی۔