حریت رہنما یسین ملک ایک نڈر اور بہادر شخصیت کو خراج تحسین

اِدھر آ ستم گر ہنر آزمائیں تو تیر آزما ہم جگر آزمائیں ملے نہ ملے ہم کو منزل اگر چہ چلو آؤ شوقِ سفر آزمائیں زاہد کو خوف خدا روکتا ہے تو کیوں نہ ہم اسکا یہ ڈر آزمائیں تمنا ہو دیدارِ یاراں کی جن کو رلائیں دلوں کو صبر آزمائیں فقط زندگی اک تماشا نہیں ہے یہ انکی عطا ہے اگر آزمائیں نہ خرف شکایت نہ کوئی گلا ہے وہ جب آزمائیں کدھر آزمائیں

حریت رہنما یسین ملک ایک نڈر اور بہادر شخصیت کو خراج تحسین
حریت رہنما یسین ملک ایک نڈر اور بہادر شخصیت کو خراج تحسین