آئی ایم ایف نے پاکستان پر زور دیا ہے کہ وہ پیٹرولیم مصنوعات کی اسمگلنگ کے خلاف کارروائی کرے۔

واشنگٹن ڈی سی میں 30 جون 2015 کو بین الاقوامی مالیاتی فنڈ کے صدر دفتر کے باہر ایک لوگو نظر آ رہا ہے۔— اے ایف پی

اسلام آباد: بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) نے ملک میں پیٹرولیم مصنوعات کی بے دریغ اسمگلنگ پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے پاکستانی حکام پر زور دیا ہے کہ وہ اسمگلنگ کی اس لعنت کو روکنے کے لیے سخت اقدامات کریں۔

سرکاری دستاویزات کے مطابق، واشنگٹن میں مقیم قرض دہندہ نے وزارت خزانہ اور فیڈرل بیورو آف ریونیو (ایف بی آر) سے ہر ماہ ملک میں اسمگل ہونے والی 120,000 ٹن ایندھن کی مصنوعات کے خلاف کی جانے والی کارروائیوں کے بارے میں تفصیلی رپورٹ طلب کی ہے۔

آئی ایم ایف نے پاکستانی حکام سے مطالبہ کیا کہ وہ ہر ماہ 143 ملین لیٹر پیٹرولیم مصنوعات کی اسمگلنگ کی روک تھام کے لیے سخت اقدامات کریں جو غیر قانونی طور پر ملک میں لائی جاتی ہیں۔

اس کے علاوہ بین الاقوامی مالیاتی ادارے نے سرحدی علاقوں میں لاجسٹک، انٹیلی جنس اور سیکیورٹی اہلکاروں کی تعداد میں اضافے پر بھی زور دیا۔

دستاویزات میں کہا گیا ہے کہ ہر سال پیٹرولیم مصنوعات کی اسمگلنگ سے پاکستان کو صرف درآمدی محصولات کی مد میں 10 ارب روپے کا نقصان ہوتا ہے۔

یہ جاننے کے قابل ہے کہ شریک حکومت ملک بھر میں انسداد اسمگلنگ مہم کے ساتھ آئی ہے۔

5 ستمبر کو وزیر اعظم انوار الحق کاکڑ نے ٹرانسپورٹ حکام کو حکم دیا تھا کہ وہ نگرانی کو بہتر بنائیں اور ملک میں اسمگلنگ کو روکنے کے لیے غیر قانونی سرحدی گزرگاہوں پر نگرانی کا ایک جامع نظام قائم کریں۔

اس کے بعد، وزیراعظم کی ہدایت کے مطابق، نگراں وزیر داخلہ سرفراز احمد بگٹی نے 10 ستمبر کو حکومت کی جانب سے سمگلنگ کی سرگرمیوں کے بارے میں معلومات فراہم کرنے والوں کو انعامی رقم دینے کے فیصلے کا اعلان کیا۔

ایندھن کی اسمگلنگ سے دہشت گردوں کو فائدہ ہوتا ہے۔

ماہ کے آغاز میں وزیر اعظم کے دفتر (پی ایم او) میں پیش کی گئی ایک رپورٹ میں انکشاف کیا گیا تھا کہ دہشت گرد ایندھن کی اسمگلنگ سے حاصل ہونے والی رقم کو فنڈنگ ​​کے ایک اہم ذریعہ کے طور پر استعمال کرتے ہیں۔

اس رپورٹ میں، جس میں سیاست دان اور سرکاری افسران جوابدہ ہیں، انکشاف کیا ہے کہ ہر سال 2.8 بلین مالیت کا پیٹرولیم ایران سے پاکستان سمگل کیا جاتا ہے۔

ایندھن کی اسمگلنگ سے پاکستان کو ہر سال 60 ارب روپے کا نقصان ہوتا ہے۔ “ملک بھر میں 995 گیس اسٹیشن غیر قانونی طور پر ایرانی ایندھن کی فروخت میں ملوث ہیں۔ تقریباً 90 سرکاری اہلکار اور 29 سیاستدان ایندھن کی اسمگلنگ میں ملوث ہیں۔”

تاہم اس رپورٹ سے ایک چونکا دینے والا انکشاف ہوا ہے کہ پاکستان اسٹیٹ آئل (PSO) کی گاڑیاں ایرانی پیٹرولیم کی نقل و حمل میں ملوث ہیں۔

Leave a Comment