میرا شوہر ۔۔۔۔اسد ۔۔۔۔مجھے بے پناہ محبت کرتا تھا  ۔۔ وہ میرے بنا سانس بھی نہیں لے سکتا تھا ۔۔

چھوٹی سی تحریر ہر لڑکی کے نام

میرا شوہر ۔۔۔۔اسد ۔۔۔۔مجھے بے پناہ محبت کرتا تھا  ۔۔ وہ میرے بنا سانس بھی نہیں لے سکتا تھا ۔۔
میرا شوہر ۔۔۔۔اسد ۔۔۔۔مجھے بے پناہ محبت کرتا تھا  ۔۔ وہ میرے بنا سانس بھی نہیں لے سکتا تھا ۔۔

وہ بتا رہی تھی میرا شوہر ۔۔۔۔اسد ۔۔۔۔مجھے بے پناہ محبت کرتا تھا  ۔۔
وہ میرے بنا سانس بھی نہیں لے سکتا تھا ۔۔۔۔۔محبت کی شادی تھی ۔۔۔ہمسفر کزن تھا ۔۔۔
محبت بے پناہ تھی ۔۔۔لیکن مجھ میں غرور بہت تھا   میں کسی سے لگا کر نہیں رکھتی تھی ۔۔میں چاہتی تھی ۔۔میں گھر میں حکمرانی کروں  ۔۔
میرا شوہر ۔۔۔۔اسد ۔۔۔۔مجھے بے پناہ محبت کرتا تھا  ۔۔
وہ میرے بنا سانس بھی نہیں لے سکتا تھا ۔۔
میری خالہ جو میری ساس تھیں۔۔۔وہ مجھے ایک دن سمجھانے لگیں ۔۔۔دیکھ سوہنیا ۔۔۔یہ گھر تمہارا ہے تم اس گھر کی مالکن ہو ۔۔۔پھر کیوں سب کے ساتھ ایسا سلوک کرتی ہو  ۔
میں غصے سے بولی ۔۔خالہ دیکھو ۔۔میں بس اتنا چاہتی ہوں میں اور اسد جو مرضی کریں جہاں مرضی جائیں آپ کو ہمارے معاملات میں بولنے کی اجازت نہیں ہے ۔۔
خالہ خاموش ہو گئی ۔۔۔
میں سب کے ساتھ بدتمیزی سے پیش آتی تھی ۔۔
مجھے اپنے اور اسد کے سوا کچھ نظر کہاں آتا تھا ۔۔
اسد مجھے کبھی کبھی سمجھاتا تھا ۔۔۔
سوہنیا ۔۔۔تم کو کیا ہو گیا ہے ۔۔۔تمہارے لہجے میں اس قدر نفرت کیوں ہوتی یے۔۔۔
میں اسد کو اپنی میٹھی باتوں میں الجھا دیتی۔۔۔۔۔
میں اس قدر مطلبی تھی ۔۔۔۔کسی کی کبھی پرواہ ہی نہیں کی ۔۔۔۔
خالہ سے بات کرنا چھوڑ دی ۔۔۔
خالہ نے بھی مجھے سمجھانا مجھے کچھ کہنا چھوڑ دیا ۔۔۔
میں کبھی شاپنگ پہ جا رہی ہوتی ۔۔اور کبھی ڈنر پہ ۔۔
میں عیاشی کرنے لگی۔۔۔
اسد میرے پاوں چوما کرتا تھا ۔۔۔۔
وہ مجھے اپنی محبت نہیں اپنی روح کہتا تھا ۔۔۔
ہماری شادی کو 4 سال ہو گئے تھے ۔۔۔۔
لیکن ہماری کوئی اولاد نہ ہوئی۔۔۔۔
دن گزرنے لگے۔۔۔۔میں پریشان سی رہنے لگی۔۔۔۔۔
اسد مجھے اولاد کا کہتا۔اب میرے بس کیا تھا بھلا۔۔۔
7 سال گزر گئے۔۔۔۔
میں ہمت ہارنے لگی۔۔۔۔۔
مجھے لگنے لگا  ۔۔میری زندگی ختم ہو رہی ہے۔۔۔
نہ جانے کیوں ۔۔اسد کی محبت بھی کم ہونے لگی ۔۔۔
رفتہ رفتہ میرا غرور میری عیاشیاں کم ہونے لگیں ۔۔۔اسد کچھ الجھا الجھا سا رہنے لگا مجھ سے۔۔۔
میں تنہا چھپ کر ۔۔۔۔بہت روتی تھی ۔۔اے اللہ مجھ پہ رحم فرما ۔۔۔
ایک دن میں نے دیکھا میری محبت میرا اسد میرا ہمسفر ۔۔۔میری دنیا ۔۔۔
وہ فون پہ کسی لڑکی سے بات کر رہا تھا  ۔۔
میری انکھوں سے آنسو کا سمندر امڈ آیا ۔۔۔
وہ لمحے یاد آئے۔۔۔جب اسد میرے پاوں چوم لیتا تھا ۔۔۔
اور آج۔۔۔۔اسد ۔۔۔کی باتیں اور محبت محدود ہو کر رہ گئی۔۔۔۔
میرے اندر کا دیہ بجھنے لگا تھا  ۔۔
میں نے اپنا بہت علاج کروایا ۔۔۔۔
لیکن ۔۔۔۔شاید میری منزل تاریک تھی ۔۔۔میں اندھیروں میں ڈوبنے والی تھی ۔۔۔
پھر ایک دن اسد میرے پاس بیٹھا تھا ۔۔۔میرے سامنے موبائل کیا ۔۔۔ایک لڑکی کی تصویر دکھائی۔۔۔۔
سوہنیا ۔۔کیسی ہے یہ ۔۔۔
میرے حلق سے آنسو اترنے لگے۔۔
میں آہستہ سے بولی۔۔۔بہت پیاری ہے ۔۔۔
اسد مسکرایا۔۔۔۔میں اس سے بہت جلد نکاح کر رہا ہوں ۔۔
12 سال گزر گئے ہیں ہماری شادی کو ۔۔میں اب اور وقت ضائع نہیں کر سکتا ۔۔۔
میرے سامنے بیٹھا وہ اس لڑکی سے محبت بھری باتیں کرنے لگا۔۔۔۔
مجھے یوں لگا ۔۔جیسے کسی نے میرے جسم کا ایک ایک ٹکڑا کاٹ دیا ہو ۔۔۔
میری سانس رکنے لگی ۔میں نے خود کو سنبھالا۔۔۔کمرے سے باہر آگئی۔۔۔
خالہ ۔۔۔جن سے میں بات کرنا گوارا نہ کرتی تھی۔۔۔۔
میں نے خالہ کی جانب دیکھا۔۔۔۔۔

خالہ میری سرخ اآنکھوں میں دیکھ کر بولیں ۔۔۔
کیا ہوا اللہ خیر کرے ۔۔۔میں خالہ کے پیروں میں گر گئی ۔۔
خالہ۔۔۔وہ اسد۔۔۔۔اسد۔۔۔
خالہ نے مجھ سنبھالا۔۔۔کیا ہوا اسد کو ۔۔۔
میری ہچکی بند گئی ۔۔خالہ وہ دوسری شادی کر رہا ہے۔۔۔
خالہ نے میرے سر پہ ہاتھ رکھا ۔۔۔توں پریشان نہ ہو میں کرتی ہوں اس سے بات ۔۔۔

خالہ نے میری وجہ سے اس رات اسد سے بہت جھگڑا کیا ۔۔مجھے پہلی بار اپنی ذات سے نفرت ہو گئی ۔۔۔
میں کتنی خود غرض تھی ۔۔۔
رشتوں کو پیروں تلے روند دیا تھا میں نے ۔۔
میں خالہ کے پاس گئی ہاتھ جوڑ کر معافی مانگنے لگی۔۔خالہ نے ماتھے پہ بوسہ کیا توں پریشان نہ ہو میری بچی ۔۔
لیکن اسد ۔۔۔بضد تھا ۔۔۔دوسری شادی کرنے پہ۔۔۔
وہ رات میں مجھے بتا رہا تھا ۔۔۔
پرسوں نکاح ہے اس کا ۔۔میں خاموش تھی ۔۔
میں کیسے روکتی اپنے اسد کو۔۔۔۔۔
میں دل ہی دل میں  دعائیں مانگ رہی تھی۔۔۔
میں ترپ رہی تھی ۔۔۔
میں ساری رات کروٹ بدلی روتی رہی ۔۔۔۔
اے اللہ مجھے معاف کر دے ۔۔۔
میں جانتی ہوں میں نے بہت سے دل توڑے ہیں۔۔۔میں نے اپنوں کو بہت تکلیف دی تھی ۔۔۔
۔۔۔صبح میری طبعیت کچھ عجیب سی تھی ۔۔۔
پھر ڈاکٹر کے پاس جانے کے بعد پتہ چلا میں ماں بننے والی ہوں   ۔
میں زور سے زور سے رونے لگی ۔۔خالہ نے میرے سر پہ ہاتھ رکھا ۔۔۔۔
میرے آنسو تھے کے رک نہیں رہے تھے ۔۔۔میں اللہ کے سامنے سجدے میں گر گئی ۔۔۔۔
میں بہت خوش تھی ۔۔۔۔
اسد گھر آیا۔۔۔اسد کل نکاح کرنے جا رہا تھا ۔۔۔جب میرے پاس آیا۔۔۔۔میں نے اسد کا ہاتھ تھاما ۔۔۔اور اسد کو بتایا اللہ نے ہم پہ کرم فرما دیا یے۔۔۔
اسد کی آنکھ سے آنسو نکلا ۔۔۔۔
مجھے سینے سے لگا لیا ۔۔
میں بہت روئی تھی اس دن ۔۔کیوں اسد کی محبت میں دو سال بعد محسوس کر رہی تھی ۔۔۔
میں اسد کی بانہوں میں ایک چیز سیکھ گئی تھی۔۔
جب ہم خودغرض ہو جاتے ہیں 
جب ہم کسی کا دل توڑتے ہیں۔کسی کو تکلیف پہنچاتے ہیں  
نفرت کی آگ جلاتے ہیں تو دوسروں کو دیئے ہوئے آنسو ہمارے لیئے کسی نہ کسی سزا ضرور بنتے ہیں 
میں نے خالہ لوگوں کے ساتھ بہت برا سلوک کیا تھا ۔۔۔جس کی سزا میں نے پائی تھئ ۔۔۔
اگر آپ میں سے کوئی بھی کسی مشکل میں پریشانی میں ہے  ۔تو تنہا بیٹھ کر سوچیں  آپ نے کسی کا دل تو نہیں دکھایا آپ نے کسی کے ساتھ برا تو نہیں کیا ۔آپ کی وجہ سے کسی کی انکھوں میں آنسو تو نہیں ائے۔۔۔۔
اگر ایسا ہے تو آگے بڑھ کر معافی مانگ لے رشتوں کو سینے سے لگا لیں۔۔۔
آپ کی مشکلات اور درد خود مٹ جائیں گے ۔۔